Site is Related to Pakistan News, Pakistan Politics, Pakistan History and Pakistan Travel.

Breaking

Wednesday, May 10, 2017

مکلی کا تاریخی قبرستان اور شاہ جہانی مسجد

ٹھٹھہ کے تاریخی قبرستان ’’مکلی‘‘ کے تاریخی قبرستان میں پانچ لاکھ سے زیادہ
قبریں اور مقبرے موجود ہیں۔ اس شہر خموشاں میں بہت سے بزرگ، شہدا، ولی اور اللہ والے مدفون ہیں۔ قبرستان میں داخل ہوتے ہی یہاں کے مکینوں کے لیے فاتحہ پڑھی۔ یہاں آ کر دل کو سکون ملا۔ شہر خموشاں میں تھوڑی دیر گزار کر تاریخی شاہجہانی مسجد کا رُخ کیا اور یہاں جمعہ کی نماز ادا کی۔ رانا یوسف اور فاروقی صاحب خوبصورت اور مغلیہ فن تعمیر کا شاہکار مسجد اور اس کے بے شمار گنبدوں کو دیکھ کر دنگ رہ گئے۔
بدین کے قریب پہنچ کر 2011-12ء میں یہاں سیلاب کا دور یاد آگیا جب ہر طرف پانی ہی پانی تھا۔ بدین شہر مکمل طور پر پانی میں ڈوبا ہوا تھا۔ پانی کا سمندر عبور کر کے کشتیوں میں جا کر متاثرین کی خدمت کی تھی۔ 2011ء کے آخر میں بدین آنا شروع ہوئے اور اب چھ سال گزر چکے اہل سندھ کی مسلسل خدمت جاری ہے۔ کیمپ کے بعد زیر تکمیل کنواں دیکھنے گئے 250 فٹ سے زیادہ گہرائی والا بڑا کنواں دیکھ کر دل راضی ہو گیا۔ 
جھانک کر اس کنوئیں کی دور سے نظر آنے والی پاتال میں صاف پانی کے چمکتے ذرات دیکھ کر دل کو خوشی ہوئی۔ مگر دور تک نظر دوڑانے سے ایک دم چکر سا آگیا۔ سلام کنواں بنانے والوں پہ کہ انہوں نے بڑی مہارت کے ساتھ جان کی پرواہ کیے بغیر 250 فٹ نیچے اتر کر کنوئیں کی کھدائی کی۔ شفیق فاروقی صاحب کہنے لگے کہ ترکی کی ایک شاعرہ کہتی ہے کہ مجھے اس بات کا ہمیشہ ملال رہے گا کہ جوانی کی عمر بے مقصد گزار دی۔
لیکن اب جو باقی ہے وہ تیری نظر ہے۔ دعا ہے بقایا زندگی اے مالک دو جہاں! تیری یاد میں، تیری مخلوق خدا کی خدمت میں گزر جائے۔ شعر سنا کر درویش بولے کہ میرا حال بھی ترکی شاعرہ جیسا ہے اب میری بھی اب یہی خواہش ہے کہ باقی زندگی میں آپ لوگوں کے ساتھ مخلوق خدا کی خدمت میں گزار دوں۔ یہ کہتے کہتے وہ آبدیدہ ہو گئے ۔

ڈاکٹر آصف محمود جاہ


Post a Comment