Friday, June 28, 2013

Ibne Insha most famous peotry

ابن انشا
انشا جي اٹھو اب کوچ کرو، اس شہر ميں جي کو لگانا کيا
وحشي کو سکوں سےکيا مطلب، جوگي کا نگر ميں ٹھکانا کيا

اس وک کے دريدہ دامن کو، ديکھو تو سہي سوچو تو سہي
... جس جھولي ميں سو چھيدا ہوئے، اس جھولي کا پھيلانا کيا

شب بيتي، چاند بھي ڈوب چلا، زنجير پڑي داوازے پہ
کيوں دير گئے گھر آئے، سجني سے کرو گے بہانا کيا

پھر ہجر کي لمبي رات مياں، سنجوگ کي تو يہي ايک گھڑي
جو دل ميں ہے لب پر آنے دو، شرمانا کيا گھبرانا کيا

اس حسن کے سچے موتي کو ہم ديکھ سکيں پر چھونا نہ سکيں
جسے ديکھ سکيں پر چھو نہ سکيں وہ دولت کيا وہ خزانہ کيا

اس کو بھي جلا دکھتے ہوئے من ايک شعلہ لال بھھوکا بن
يوں آنسو بن نہ جانا کيا يوں ماني ميں جانا کيا

جب شہر کے لوگ نہ رستا ديں، کيوں بن ميں نہ جا بسرام کرے
ديوانوں کي سي نہ بات کرےتو اور کرے ديوانہ کيا
Ibne Insha most famous peotry